ڈنمارک گرین کارڈ ہولڈرز کی آپ بیتی

4
2256

ذہن پر خیالوں کے جمگھٹے میں کوئی صدا ایسی نہیں جسے آواز کہ سکوں، ہزاروں سوچیں ہیں اور ہزاروں لفظوں سے الجھتی چلی جا رہی ہیں۔ ، کبھی لگتا ہے وہی دیس جسے چھوڑ آئے ہیں دل ابھی تک وہیں بسا ھے، اور کبھی لگتا ہے کہ اپنا تو وہاں کوئی ہے ہی نہیں۔
حال کی بے حالی نے ایسی گرد اڑائی ہے کہ ساری سوچیں واہمے بن کہ رہ گئی ہیں، لوگ کہتے ہیں کہ پاکستان بدترین حالات میں گرتا چلا جا رہا ہے، اخبار اور ٹیلی ویژن کی ساری خبریں واہموں میں اضافے کے سوا کچھ نہیں کرتیں، ابھی تو دل ہی نہیں کرتا کہ کسی پاکستانی چینل کو دیکھیں، کبھی کبھی تو جنگ کی ویب سائٹ کے نام سے بھی خوف آنے لگتا ہے۔
پاکستان سے احباب ہجرت کی فکر میں ہیں اور سمجھتے ہیں کہ جو ھم نے کیا وہی ٹھیک تھا، بہت سے لوگ جن جن کے حالات نے اجازت دی، یا کسی سکالرشپ کا سہارا ملا وطن سے باہر نکل آئے اور بہت سے فیصلوں کے منتظر ہیں۔ ان کی آنکھوں میں بھی وہی سپنے ہیں جو ہم نے سجائے تھے، جیسے کسی الف لیلوی داستان میں کوئی چراغ مل جایا کرتا ہے، یا کوئی جادو کی ہنڈیا، کوئی طلسماتی چھڑی یا کرشماتی زنبیل، غرضیکہ وہ ساری ان کہی خواہشیں، آسیں اور مرادیں جو راتوں کے آنگن میں خواب بن کر آتی ہیں، دن کے اجالوں میں تعبیر ہونے لگیں گی۔
پہلے پہل تو دوستوں کو سمجھایا کہ ہم تو چڑیا کے بچے کی طرح گھونسلے سے گرنے والے ننھے پرندوں کی طرح ہیں، ارے تم نہ گرنا، تم نہ آنا باہر، یہاں کوئی اپنا نہیں ہے، ۔۔مگر کوئی اس صدا پر کان نہیں دھرتا، ٹھیک ویسے ہی جیسے ہم نے سنی ان سنی کیں تھیں، مگر ایک سنہرے مستقبل کا خواب گدگداتا تھا، ، ایک یوٹوپیا تھا جس کا سحر کشاں کشاں ہمیں سکینڈے نیویا میں کھنچ لایا، جو ہر دلیل کا ایک ہی جواب دیتا تھا کہ جو ہو گا دیکھا جائے گا۔
اور آج وہ ساری روشن زندگی میرے سامنے پڑی ہے، اٹھارہ سالہ تعلیم اور چار سالہ آدھے ادھورے تجربے کے بعد لگتا ہے کہ سفر پھر صفر سے آغارکرنا ہے۔کسی نئی زبان کی ابجد سیکھنے کے لئے بچپن میں پلٹنا پڑتا ہے، لیکن سوال یہ ہے کی کسی طور تو کما کھائے مچھندر،۔۔کاروانِ زندگی چلانے کے لئے کیا کیا جائے۔
ایک ایسے دیس میں جہاں زبان روزگار کے رستے کی رکاوٹ ہو، اور پہلے سے سوار مسافر اپنی محرومیوں کا تاوان بھی آپ سے چاہتے ہوں، وہاں زندگی مشکل ترین ہو جایا کرتی ہے، آج زندگی اپنی مشکل ترین شکل میں میرے سامنے کھڑی ہے، ایک بے زبان شخص کے لئے، ہوٹلوں کے برتن سنوارنا، دفتروں میں جھاڑو لگانا، یا ٹھٹرتی صبحوں میں گھر گھر اخبار پھینکنا، یا عارضی کام کی کسی کمپنی کے ساتھ دیہاڑی لگانا ہی ایسے کام ہیں جن سے روزمرہ کی ضروریات کمائی جا سکتی ہیں۔

میں لمحہ لمحہ  دور کہیں دور روشنی کی ایک نوید دیکھتا ہوں اور سوچتا ہوں کی آئے گی اک روز وہ صبحِ امید اور شامِ آرزو میں ڈھل جائے گی۔۔۔۔

This pic is not from Denmark, just an imagination of homless pakistanies abroad

4 تبصرے

  1. Talkh haqaiq hain.. aur waqai jab kise se kehte hain ke bhai mulk mai zindagi banane ki koshish kro.. to kehte hain ke khud to mazay loot rahe ho europe ke .. nit naye mobile le kar ghomte ho.. aur humein rokte ho..!! kon samjhaye un nadanon ko ke is chamakti damakti zindagi main sukoon naam ki cheez nahi.. har lamha har pal.. mehnat.. struggle.. aur main ye nahi kehta ke log kamiyab nahi hote laikin 20 main 1 kamyab shakhs ki misaal le kar is aag main kood prna… kahan ki aqalmandi hai?? un struggling 19 logon ko koi nahi dekhta..!! jis ke paas waasail hon wo to jo dil main aye kare.. laikin dukh hota hai jb loog kashtiyaan jala kar a jate hain.. ghar baar bech kr naya ghar bnane ki khwahish.. jis main un ki umr tmam ho jati hai..

  2. http://gizmodo.com/5671062/there-are-5000-janitors-in-the-us-with-phds
    There Are 5,000 Janitors in the U.S. with PhDs

    There are 18,000 parking lot attendants in the U.S. with college degrees. There are 5,000 janitors in the U.S. with PhDs. In all, some 17 million college-educated Americans have jobs that don't require their level of education. Why?

    The data comes from a the Bureau of Labor Statistics, and can be seen here in handy, depressing chart form:

    There Are 5,000 Janitors in the U.S. with PhDs

    At the Chronicle, where the above chart was posted, Richard Vedder argues that maybe we place too much importance on higher education, citing a new study by the National Bureau of Economic Research:

    This week an extraordinarily interesting new study was posted on the Web site of America's most prestigious economic-research organization, the National Bureau of Economic Research. Three highly regarded economists (one of whom has won the Nobel Prize in Economic Science) have produced "Estimating Marginal Returns in Education," Working Paper 16474 of the NBER. After very sophisticated and elaborate analysis, the authors conclude "In general, marginal and average returns to college are not the same." (p. 28)

    In other words, even if on average, an investment in higher education yields a good, say 10 percent, rate of return, it does not follow that adding to existing investments will yield that return, partly for reasons outlined above.

  3. i am in UK for last 3 and a half years, Started my carrier in a Pakistani Restaurant as a Waiter, use to work for 12 hours a day with no break and loads of Rubbish from Pakistani owner, in 3 and half years i have traveled up in the ladder, Working in a World's Leading company in Cash Handling in Risk Management Department. My Story is not Unique or Extraordinary anyway. There are many immigrants in UK who have similar stories. Immigrants are richer then Local on an average but require Struggle. Struggle always reward no matter where you are.

تبصرہ کریں

برائے مہربانی اپنا تبصرہ داخل کریں
اپنا نام داخل کریں